Archive for the ‘Islam Ahmadiyya’ category

Nawa e Waqt Columnist Israr Bukhari Exposed

July 8, 2010

اسرار بخاری صاحب کا کالم اور ان کا جھوٹ


آج آپ کا کالم نوائے وقت اخبار میں پڑھنے کا اتفاق ہوا۔
 یوں تو وقت کے ساتھ ساتھ ملک میں موجود آپ جیسے دانشوروں دوستوں کی وجہ سے ملک کو کسی بیرونی دشمن کی ضرورت نہیں ہے اور آپ جیسے لوگوں کی وجہ سے اب ملکی حالات ایسے ہو گئے ہیں کہ ہم تیزی سی انارکی کی طرف بڑھ رہے ہیں اور بظاہر ایک فرقہ واریت کے ایک ایسے آتش فشاں پر بیٹھے ہیں کہ جس کا دوھواں تو بہت دن سے نکل رہا ہے اب صرف لاوا نکلنے کو ہے۔
آپ کے اس کالم میں شروع سے لے کر آخر تک جھوٹ ہی جھوٹ ہے اور وہ جھوٹ جس کو آپ  شیر مادر سمجھ کر پیتے ہیں اس کا بھر پور اظہار آپ نے اس کالم میں کیا ہے۔ جزاک اللہ

Misquoted text by Israr Bukhari

صاحب میں جواب تو ہر بات کا دینا چاہ رہا ہوں مگر شاید آپ میں اتنا حوصلہ نہ ہو فقط الفضل 31 اگست 1938 کے الفضل کا جو اقتباس آپ نے پیش کیا ہے صاحب  اس کی حقیقت صرف یہ ہے کہ حضرت مصلح موعود رضی اللہ تعالیٰ عنہ فرما رہے ہیں کہ ایک منافق کا گمنام خط آیا ہے جو کہ  یہ ہے۔۔۔۔۔۔ اس وقت میرے سامنے الفضل کا شمارہ موجود ہے۔ اگر چاہیں تو کاپی بھیج دوں۔بلکہ اس بلاگ کا مطالعہ کریں
کیا یہ فقرہ حضرت مصلح موعود رضی اللہ تعالیٰ کا ہے۔ نہیں نہیں حضور نے صرف اور صرف ایک منافق کے خط کا اقتباس پیش کیا ہے۔ بھیا لا تقربوا الصلاۃ پر عمل مت کر الا و انتم سکاریٰ بھی پڑھو۔

Alfazl 31 August 1938

مخالفت کریں ضرور کریں
مگر جھوٹ بول کر اپنے لئے عذاب قبر اور عذاب آخرت کنفرم مت کریں-
کیا آپ سمجھتے ہیں کہ جھوٹ بول کر آپ جماعت احمدیہ کو کوئی نقصان پہنچا لیں گے۔ بھئی گذشتہ سو سوا سوسال سے آپ اور آپ کےآباؤ اجداد یہ کام کرتے چلے جارہے ہیں مگر جماعت احمدیہ نے تو تمام دنیا میں اسلام ہی پھیلایا ہے اور پھیلاتی چلی جارہی ہے۔ آپ کی یہ مذموم  کوششیں کبھی کامیاب نہ ہوں گی۔ اللہ تعالیٰ آپ کو اور آپ کے ساتھیوں کو ہدایت عطا فرمائے اور جھوٹ اور دروغ گوئی کو چھوڑ کر کسی اچھے کام کی طرف توجہ فرمائیں۔
قرآن مجید نے جھوٹے کے لئے لعنت اللہ علی الکاذبین کی وعید سنائی ہے۔

Advertisements

His call came as he knelt in Prayer

July 1, 2010

This inspiring poem is penned by Bint e Mahmood on May 28, 2010 incidents. PakTeaHouse has published it first. We are reproducing it with thanks.

His call came as he knelt in Prayer

Just an hour ago he had looked and smiled
at his young bride, at his newborn child
taking leave from his aging mother, one last time
he had wished them all goodbye before heading outside

His call came as he knelt in Prayer

Grenades exploded, bullets sprayed,
all this as our brothers prayed
blood, gore, carnage everywhere
yet not a single word of despair

His call came as he knelt in Prayer

The attack so sudden, devastating terror
the calm, the bravery fuelled with prayers
the resilience, the fortitude, the courage
these tales I’m sure will be told for years

His call came as he knelt in Prayer

He called his father, his mother, his wife
I’m hurt he said, I may not survive.
The phone is ringing no one answers…
Oh Allah, oh Lord please, please keep him alive!

His call came as he knelt in Prayer

Brethren seven seas away
pray as they watch in utter dismay
Their fervent midnight cries and woes
for God Almighty to punish the foes

His call came as he knelt in Prayer

Shoes all around, lying unclaimed
The house of Allah is blood stained
The shattered walls tell amazing stories
of unblemished wills and future glories

His call came as he knelt in Prayer

This is my son, I know his hand
said the mother, barely able to stand
From mine to Allah’s lap he goes
Have you ever heard of courage so grand?

His call came as he knelt in Prayer

The only brother of sisters three
the father who fought to keep the nation free
the judge, the general, the doctor was he
taken in a wicked killing spree

His call came as he knelt in Prayer

The wrinkled face smiled
as the well wishers filed
The young widow so composed
as she caressed her unborn child

His call came as he knelt in prayer

The mother weeps, the baby sleeps
the sister sighs, the wife wipes the corners of her eyes
the supplication, the tears, the heart-wrenching prayers
reserved only for the Lord of the earth and the skies

His call came as he knelt in Prayer

Farewell, farewell, our martyrs farewell!
You knelt before Him and in His name you fell
In the Gardens of Heaven you shall dwell
Paradise awaits, for you have served Him well

His call came as he knelt in Prayer

Ayesha N. Rashid on Lahore Attacks

June 29, 2010

Originally appeared in Pak Tea House on June 29, 2010. emrun feels proud to reproduce it here with permission.

Armed with grenades, machine guns and suicide vests, Pakistani terrorists killed 86 Ahmadi worshipers in a well organized affray in Lahore on May 28th. Although terrorism has become a routine activity in Pakistan, the Lahore attacks are anomalous in nature. While other attacks are state censured, the attacks on Ahmadi Muslims are state sanctioned. Decades ago, the Government of Pakistan passed laws against Ahmadis, clerics gave verdicts on their religious status and the public completely ostracized them as Pakistanis and as human beings. The police played their part by charging Ahmadis with false cases, subjecting them to torture and demolishing their mosques. The media then contributed through inciting hate speech against them. Thus, it was about time to “eradicate all infidels from Pakistan” as an assailant involved in Lahore attacks declared.

So on May 28th, the terrorists only had to tame a few unarmed young men providing security at the mosques. An unwilling police force arrived after an hour, and with limited ammunition. The terrorists, who were confirmed a direct flight to heaven and 72 virgins, religiously fulfilled their duty. They did not betray their masters nor their government, for they are only the religious hit men furthering state sanctioned terrorism.

Despite being the recipients of state sanctioned terrorism for nearly three decades, the Ahmadiyya Muslim Community comes out as one of the most productive and peaceful communities in Pakistan and the world. This community has a track record of consistently establishing peace, regardless of second class treatment. In 1974, when the Pakistani Government violated their basic human rights and declared them non-Muslims, they did not violate the laws of the country.  Rather, they accepted the decision to avoid bloodshed. In 1984, when they were denied the right to practice their religion, yet again they responded with steadfastness for the establishment of peace in Pakistan. In 1989, when the community arrived upon its golden jubilee, the Government of Pakistan denied them even this day, forbidding any form of celebration. In 2003, when the community was stricken with grief on the death of the head of their community, the clerics demanded to abjure his burial in Pakistan. Pakistani Ahmadis deprived of seeing their beloved for 19 long years were deprived once again of their chance to bid him farewell. Still, they did not protest, nor did they commit violence of any sort. They sufficed on seeing his funeral ceremony on television as he was buried in England with dignity.

While the enemies of this community carry out these atrocities under governmental acquiescence, Ahmadis always respond with dignity and honour. They struggle towards a better future for themselves and for Pakistan. The community boasts a 99% literacy rate both in men and women as compared to a 54% literacy rate in Pakistan. Of the 4 million Pakistani Ahmadis, not a single one is a burden on the Pakistani economy. Begging is unheard of in the community. Those living in Pakistan are contributing in the society through their services and those living abroad contribute in the foreign reserves of Pakistan. The community is serving as the ambassador of Pakistan all over the world. It also is the procurer of the only Nobel Laureate and the only judge of International court of Justice of Pakistani citizenship. The Ahmadiyya Community has given Pakistan a number of world renowned doctors, scientists, bankers, computer professionals, agriculturists, lawyers, military men and economists. Above all the community has a promising younger generation to serve the country. However all this has only earned them social boycott, the destruction of their mosques, imprisonment and death.

Had the Pakistani Government not resigned to the will of the religious clergy, things would have been different. The 1974 decision to mingle state with religion developed the country into an intolerant society which paved way for the 1984 legislation. Next in line was an army of religious hit men who considered it their God given duty to kill. The only way out of this purgatory is to reestablish Pakistan as a secular state per Jinnah’s vision. Or else the country will turn into a slaughtering house for there is no dearth of either religious  hit men or “infidels” in Pakistan.

http://pakteahouse.wordpress.com/2010/06/29/9096/

Ahmadi Muslims’ Promise to Their Khalifah

June 28, 2010

Ahmadi Muslims on the Forefront of Safeguarding the Honor of the Holy Prophet

June 14, 2010

Namoos-e-Risalat_by_Faheem_Qureshi (PDF)

We apologize for the poor image quality. Please download and magnify to read it.

May 28 Attacks on Ahmadiyya Mosque – Courtesy BBC Urdu

June 1, 2010

میں کس کے ہاتھ پہ اپنا لہو تلاش کروں۔

Ahmadiiya Masjid Attacked: May 28

 جمعہ کی دوپہر کو بیک وقت لاہور کے علاقوں ماڈل ٹاون اور گڑھی شاہو کے حملوں میں سو کے قریب احمدی ہلاک اور ڈیڑھ سو سے زاید زخمی ہوۓ. خبر تمام اخبارات کی شہ سرخی بنی تو حکمرانوں نے بھی مذمتی بیانات داغ کر اپنا فرض نبھایا. ایک قیامت خیز نظارہ تھا جب قانونی طور پر ثابت شدہ کافر احمدی نماز جمعہ ادا کر رہے تھے اور ثابت شدہ قانونی مسلمان ہینڈ گرنیڈ بموں اور ہتھیاروں سے مسلح دھماکوں کے ساتھ ” قادیانیت مردہ باد” کے نعرے لگاتے ہوۓ ان پرگولیاں برسا رہے تھے ، میں حیران تھی کہ . …..”دل کو روؤں کہ پیٹوں جگر کو میں ” نہتے احمدی خود کو بچانے کے لئے مسلح حملہ اوروں سے مسلسل دست و پا تھے . میڈیا کے لئے یہ سنسنی خیز خبرموضوع سخن بنی جس پر سیاسی و سماجی مباحثے بھی کئے گئے .اور بلا آخر اس سر عام قتل غارت گری کو دہشت گردی کی ایک واردات جس کا ذمہ دار طالبان کی کالعدم تنظیم کو قرار دے دیا گیا .

مگر میں یہ کیسے مان لوں کہ یہ فقط ایک دہشت گردی کی واردات تھی کہ جب میری آنکھوں نے چک سکندر اور ننکانہ صاحب میں سینکڑوں احمدی خاندانوں کو زندہ جلتے دیکھا ہو . میں یہ کیسے مان جاؤں کہ اس کی ذمدار فقط کالعدم تنظیم ہے کہ جب مرے کانوں نے سات اکتوبر دوہزار پانچ کو ماہ صیام کی ایک شام مندی بہاؤ الدین میں احمدی نمازیوں کی چیخ و پکار اوران پر ہوتی گولیوں کی بوچھاڑ سنی ہو . میں یہ کیسے قبول کر لوں کہ اس کا مقصد فقط خوف ہراس پھیلانا تھا جب میں نے مظفر آباد اور ایبٹ آباد میں جانوں سے گئے ااحمدی خاندانوں کے عزیز اقارب کے آنسو پونچھے ہوں ، اور جب میں نے قوم کے مسیحاؤں کے روپ میں احمدی ڈاکٹرز کی بیہیمانہ قتل و غارت گری پراپنی قوم کی بد بختی پر خوں کے آنسو بہائے ہوں .اگر آج احمدیوں پر یہ حملہ دہشت گردی ہے تو پھر ١٩٨٩ میں چک سکندر اور ننکانہ صاحب میں سینکڑوں احمدی خاندانوں کی جائے املاک لوٹ کر ان کو زندہ جلا دینا کیا تھا ؟ اگر آج اس حملے کی ذمدار کالعدم تنظیم ہی ہے تو پھر مندی بہاؤ الدین میں برپا قیامت کا ذمہ دار کون تھا ؟ اگر آج ان حملہ اوروں کا مقصد فقط دہشت پھیلانا ہے تو پھر ١٩٧٤ سے اب تک احمدیوں پر کئے جانے والے مظالم اور بد سلوکیوں کے مقاصد کیا تھے ؟
پاکستان میں جماعت احمدیہ ١٩٧٤ میں پارلیمان کے غیر مسلم قرار دینے کے بعد سے جس وحشیانہ سلوک سے دو چار ہے ہاں وہ دہشت گردی ضرور ہے مگر طالبانی دہشت گردی ہرگز نہیں بلکہ حکمرانی اور قانونی دہشتگردی ہے . ہاں یہ دھہشتگردانہ واردات ضرورہے مگر اس کی ذمہ دار کالعدم تنظیم نہیں بلکہ اس کی ذمہ دار بھٹو اور اس کے بعد آنے والی ہر حکومت ہے . ہاں یہ سر ا سر ظلم ضرور ہے مگر یہاں پر ظالم طالبان نہیں ہمارا معاشرہ اور ہمارا قانون ہے ، ہاں یہ انسانی حقوق کی خلاف ورزی ضرور ہے مگر اس کی ذمہ دار عوام کی محافظ پولیس ہے ، ہاں یہ فقط تعصب ہی تو ہے مگر اس کی قصور وار ہماری زرد صحافت بھی ہے .اور سب سے بڑھ کر ہماری قوم جو اس قوت سماعت سے محروم ہے جو مظلوم کی داستان سن سکے ، جو اس قوت بصارت سے محروم ہے جو مجبور ہم وطنوں کی بے بسی دیکھ سکے ، اس دل سے محروم ہے جو کسی کا درد محسوس کر سکے.

ایک ریاست کی یہ ذمہ داری نہیں کہ وہ کسی شہری کے ایمان کا فیصلہ آج میں حکمران وقت ، اور قانون نافذ کرنے والے اداروں سے یہ سوال پوچھنا چاہتی ہوں کہ آخر اس بے حسی، اور غیر ذمہ داری کی کوئی انتہا بھی ہے ؟ میں کس کے ہاتھ پہ اپنا لہو تلاش کروں۔ جمعہ کی دوپہر کو بیک وقت لاہور کے علاقوں ماڈل ٹاون اور گڑھی شاہو کے حملوں میں سو کے قریب احمدی ہلاک اور ڈیڑھ سو سے زاید زخمی ہوۓ. خبر تمام اخبارات کی شہ سرخی بنی تو حکمرانوں نے بھی مذمتی بیانات داغ کر اپنا فرض نبھایا. ایک قیامت خیز نظارہ تھا جب قانونی طور پر ثابت شدہ کافر احمدی نماز جمعہ ادا کر رہے تھے اور ثابت شدہ قانونی مسلمان ہینڈ گرنیڈ بموں اور ہتھیاروں سے مسلح دھماکوں کے ساتھ ” قادیانیت مردہ باد” کے نعرے لگاتے ہوۓ ان پرگولیاں برسا رہے تھے ، میں حیران تھی کہ . …..”دل کو روؤں کہ پیٹوں جگر کو میں ” نہتے احمدی خود کو بچانے کے لئے مسلح حملہ اوروں سے مسلسل دست و پا تھے . میڈیا کے لئے یہ سنسنی خیز خبرموضوع سخن بنی جس پر سیاسی و سماجی مباحثے بھی کئے گئے .اور بلا آخر اس سر عام قتل غارت گری کو دہشت گردی کی ایک واردات جس کا ذمہ دار طالبان کی کالعدم تنظیم کو قرار دے دیا گیا .

مگر میں یہ کیسے مان لوں کہ یہ فقط ایک دہشت گردی کی واردات تھی کہ جب میری آنکھوں نے چک سکندر اور ننکانہ صاحب میں سینکڑوں احمدی خاندانوں کو زندہ جلتے دیکھا ہو . میں یہ کیسے مان جاؤں کہ اس کی ذمدار فقط کالعدم تنظیم ہے کہ جب مرے کانوں نے سات اکتوبر دوہزار پانچ کو ماہ صیام کی ایک شام مندی بہاؤ الدین میں احمدی نمازیوں کی چیخ و پکار اوران پر ہوتی گولیوں کی بوچھاڑ سنی ہو . میں یہ کیسے قبول کر لوں کہ اس کا مقصد فقط خوف ہراس پھیلانا تھا جب میں نے مظفر آباد اور ایبٹ آباد میں جانوں سے گئے ااحمدی خاندانوں کے عزیز اقارب کے آنسو پونچھے ہوں ، اور جب میں نے قوم کے مسیحاؤں کے روپ میں احمدی ڈاکٹرز کی بیہیمانہ قتل و غارت گری پراپنی قوم کی بد بختی پر خوں کے آنسو بہائے ہوں .اگر آج احمدیوں پر یہ حملہ دہشت گردی ہے تو پھر ١٩٨٩ میں چک سکندر اور ننکانہ صاحب میں سینکڑوں احمدی خاندانوں کی جائے املاک لوٹ کر ان کو زندہ جلا دینا کیا تھا ؟ اگر آج اس حملے کی ذمدار کالعدم تنظیم ہی ہے تو پھر مندی بہاؤ الدین میں برپا قیامت کا ذمہ دار کون تھا ؟ اگر آج ان حملہ اوروں کا مقصد فقط دہشت پھیلانا ہے تو پھر ١٩٧٤ سے اب تک احمدیوں پر کئے جانے والے مظالم اور بد سلوکیوں کے مقاصد کیا تھے ؟

 
پاکستان میں جماعت احمدیہ ١٩٧٤ میں پارلیمان کے غیر مسلم قرار دینے کے بعد سے جس وحشیانہ سلوک سے دو چار ہے ہاں وہ دہشت گردی ضرور ہے مگر طالبانی دہشت گردی ہرگز نہیں بلکہ حکمرانی اور قانونی دہشتگردی ہے . ہاں یہ دھہشتگردانہ واردات ضرورہے مگر اس کی ذمہ دار کالعدم تنظیم نہیں بلکہ اس کی ذمہ دار بھٹو اور اس کے بعد آنے والی ہر حکومت ہے . ہاں یہ سر ا سر ظلم ضرور ہے مگر یہاں پر ظالم طالبان نہیں ہمارا معاشرہ اور ہمارا قانون ہے ، ہاں یہ انسانی حقوق کی خلاف ورزی ضرور ہے مگر اس کی ذمہ دار عوام کی محافظ پولیس ہے ، ہاں یہ فقط تعصب ہی تو ہے مگر اس کی قصور وار ہماری زرد صحافت بھی ہے .اور سب سے بڑھ کر ہماری قوم جو اس قوت سماعت سے محروم ہے جو مظلوم کی داستان سن سکے ، جو اس قوت بصارت سے محروم ہے جو مجبور ہم وطنوں کی بے بسی دیکھ سکے ، اس دل سے محروم ہے جو کسی کا درد محسوس کر سکے.
ایک ریاست کی یہ ذمہ داری نہیں کہ وہ کسی شہری کے ایمان کا فیصلہ آج میں حکمران وقت ، اور قانون نافذ کرنے والے اداروں سے یہ سوال پوچھنا چاہتی ہوں کہ آخر اس بے حسی، اور غیر ذمہ داری کی کوئی انتہا بھی ہے ؟

 پتھر پہ لکیر ہے یہ تقدیر مٹا دیکھو گر ہمت ہے — یا ظلم مٹے گا دھرتی سے یا دھرتی خود مٹ جائے گی

عفاف اظہر

What’s really behind female inequality in American?

March 3, 2010

Jessica Valenti has opened my eyes to a deeper insight. Ms. Valenti described female oppression in America through physical abuse, sexual abuse and sexism in the workplace. As a Muslim woman who proudly observes hijab and interacts with men on strictly professional levels, I have been protected from these oppressive acts. The day women stop serving men merely as a commodity that comes in different hairstyles and makeup, their dream of equality will materialize.

How ironic that my hijab is looked upon as a tool of female oppression.

Ayesha N. Rashid, Richmond

Appeared in Washington Post on 27 Feb 2010

http://www.washingtonpost.com/wp-dyn/content/article/2010/02/26/AR2010022606070.html